مقبوضہ کشمیر میں غیر معینہ مدت کیلئے کرفیو نافذ

مودی سرکار نے مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈاؤن کرتے ہوئے دارالحکومت سری نگر سمیت وادی کے کئی اضلاع میں غیر معینہ مدت کے لیے کرفیو نافذ کر دیا۔

بھارت کی ہندو انتہا پسند حکمران جماعت نے مقبوضہ کشمیر میں حریت رہنماؤں سمیت دو سابق وزرائے اعلیٰ کو گھروں پر نظر بند کر دیا اور ہزاروں اضافی فوجی تعینات کر کے اہم شاہراؤں کو خاردار تاریں لگا کر بند کر دیا۔

مقبوضہ وادی میں شہریوں کی نقل و حرکت پر پابندی عائد کرنے کے ساتھ انٹرنیٹ سروسز، موبائل فون اور لینڈ لائن ٹیلی فون سروسز بھی معطل کر دی گئی ہیں۔

اسکول اور کالجز سمیت تمام تعلیمی ادارے بند کر دیئے گئے ہیں جب کہ یونی ورسٹیز میں 5 سے 10 اگست تک ہونے والے امتحانات ملتوی کر دیئے گئے ہیں اور کسی بھی قسم کے اجتماعات پر بھی پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

سابق وزرائے اعلیٰ محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ نے ایک اجلاس میں شرکت کی تھی جس میں مقبوضہ کشمیر کی بگڑتی ہوئی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔

محبوبہ مفتی نے کہا کہ امن کے لیے لڑنے والے منتخب نمائندوں کو بھی گھروں پر نظربند کیا جا رہا ہے، مقبوضہ کشمیر میں عوام کی آواز بند کی جا رہی ہے اور دنیا دیکھ رہی ہے۔ عمر عبداللہ کہتے ہیں کہ اللہ ہم سب کی حفاظت فرمائے۔

Check Also

افغان پولیس اہلکار نے فائرنگ کر کے اپنے ہی 7 ساتھیوں کو قتل کر ڈالا

قندھار: افغان پولیس اہلکار نے اپنے ہی ساتھیوں پر فائرنگ کر کے 7 اہلکاروں کو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *