پاکستان سے کشیدگی بھارت کو لے بیٹھی۔۔۔۔ ائیر انڈیا کو بد ترین نقصان کا سامنا، نیا بحران پیدا ہوگیا

واشنگٹن (پی پی این مانیٹرنگ ڈیسک) بین الاقوامی فلائٹ آپریشنز کو مانیٹر کرنے والے او پی ایس گروپ کا کہنا ہے کہ فروری میں پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگے کے بعد فضائی پابندی سیکڑوں کمرشل اور کارگو پروازوں کو متاثر کر رہی ہے۔

اس حوالے سے ’پاکستان کی فضائی حدود کی پابندی کا کوئی خاتمہ نہیںہوا‘ کے عنوان سے رپورٹ میں گروپ نے تخمینہ لگایا کہ فضائی حدود کی بندش سے یومیہ تقریباًً 350 پروازیں متاثر ہورہی ہیں۔ ایئرانڈیا کو یہ نقصان اس لیے ہو رہا ہے کہ پاکستان نے بھارت آنے جانے والی پروازوں کے لیے اپنی فضائی حدود تاحال بند رکھی ہوئی ہیں جس کی وجہ سے ایئرانڈیا کی نئی دہلی سے یورپ، خلیجی ممالک اور امریکہ جانے والی پروازوں کو زیادہ طویل راستے سے سفر کرنا پڑ رہا ہے اور کہیں زیادہ اخراجات اٹھانے پڑ رہے ہیں۔ نئی دہلی سے امریکہ جانے والی پروازیں اب منزل پر پہنچنے میں 2سے 3گھنٹے اضافی وقت لے رہی ہیں۔

اسی طرح یورپ جانے والی پروازیں بھی 2گھنٹے زیادہ طویل ہو گئی ہیں چنانچہ ایئرانڈیا کو زیادہ ایندھن خرچ ہونے اور دیگر مدات میں بھاری نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے۔واضح رہے کہ او پی ایس گروپ کی جانب سے حساب انٹرنیشنل سول ایوی ایشن آرگنائزیشن کی جانب سے فراہم کیے گئے اعداد و شمار کو استعمال کرتے ہوئے لگایا گیا۔اس سے قبل غیر ملکی خبررساں ادارے رائٹرز کی جانب سے بنائے گئے ریجنل فلائٹس کے نقشے میں بتایا گیا تھا کہ پابندی سے یورپ میں 4 اور جنوب مشرقی ایشیا میں 4 ایئرپورٹس کے درمیان کم از کم 311 پروازیں متاثر ہورہی ہیں۔خیال رہے کہ بھارت کی جانب سے فروری کے آخر میں شمالی پاکستان کے حصوں میں فضائی حملوں کی کوشش کے بعد سے پاکستان نے اپنی فضائی حدود کو محدود کردیا تھا، ان پابندیوں میں سے زیادہ تر فروری سے نافذ ہیں جو کم از کم 15 مئی تک موثر رہیں گی۔

Check Also

افغان پولیس اہلکار نے فائرنگ کر کے اپنے ہی 7 ساتھیوں کو قتل کر ڈالا

قندھار: افغان پولیس اہلکار نے اپنے ہی ساتھیوں پر فائرنگ کر کے 7 اہلکاروں کو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *