امریکی فوجی انخلا کی تردید، افغان طالبان اور امریکا موقف پر ڈٹ گئے

اسلام آباد(پی پی این) امریکی حکومت کی جانب سے پینترا بدلتے ہوئے یہ اعلان سامنے آنے کے بعد کہ اس کا افغانستان سے فوج واپس بلوانے کا کوئی ارادہ نہیں ،افغان طالبان کا کہنا ہے کہ وہ آئندہ ماہ امریکی حکام سے سعودی عرب میں ملاقات کریں گے۔

طالبان رہنما کا کہنا تھا کہ ہم جنوری میں امریکی حکام سے سعودی عرب میں ملاقات کریں گے اورابو ظہبی میں نامکمل رہ جانے والی گفتگو کو پایہ تکمیل تک پہنچائے گے۔

اس سلسلے میں واشنگٹن میں موجود سفارتی ذرائع کا کہنا تھا کہ پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی بھی، جو افغان امن عمل کے حوالے سے بات چیت کے لیے قطر میں موجود ہیں، جلد سعودی عرب کا دورہ کرسکتے ہیں۔

گزشتہ ہفتے ہی وزیرخارجہ نے افغانستان میں قیامِ امن کی کوششوں کے سلسلے میں ایک علاقائی حکمتِ عملی ترتیب دینے کے لیے افغانستان، ایران، چین اور روس کا سہ روزہ دورہ کیا تھا۔

تاہم اتوار تک یہ بات واضح ہوگئی کہ امریکا اور طالبان سعودی عرب میں ہونے والے آئندہ مذاکراتی عمل کے لیے اپنی پوزیشنز واضح کررہے ہیں۔

ایک جانب امریکا نے افغانستان سے اپنے فوجی دستے واپس بلوانے کا ارادہ منسوخ کردیا تو دوسری جانب افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ وہ افغان حکومت کو اس عمل میں شامل کرنے سے قبل امریکی حکومت سے ایک معاہدہ کرنا چاہتے ہیں۔

Check Also

افغان پولیس اہلکار نے فائرنگ کر کے اپنے ہی 7 ساتھیوں کو قتل کر ڈالا

قندھار: افغان پولیس اہلکار نے اپنے ہی ساتھیوں پر فائرنگ کر کے 7 اہلکاروں کو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *