بحری جہازوں پر قبضہ: روس اور یوکرین کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی

کیف(پی پی این مانیٹرنگ ڈیسک)  روس کی جانب سے یوکرین کے دو جنگی جہازوں سمیت 3 بحری جہازوں پر قبضے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی ہے۔

‘اے ایف پی’ کے مطابق روسی وزیر خارجہ سرگئی لاروف نے بیان میں کہا کہ یوکرینی جہازوں کو روسی سمندری حدود کی خلاف ورزی پر قبضے میں لیا گیا۔

یوکرین کے صدر پیٹرو پوروشینکو نے روسی اقدام کو فوجی جارحیت قرار دیتے ہوئے بحیرہ اسود شمالی ساحل پر واقع جزیرہ نما کرائمیا کے قریب قبضے میں لیے گئے یوکرینی جہازوں اور ان کے عملے کو چھوڑنے کا مطالبہ کیا ہے۔

انہوں نے قوم سے خطاب میں روس پر الزام لگایا کہ وہ کیف سے اپنے تنازع کو نئی سطح پر لے جا رہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ واقعہ روسی فوج کے ریگولر یونٹس کی تکبرانہ اور کھلی شراکت یوکرین کے ساتھ تنازع کو ظاہر کرتا ہے۔

پیٹرو پوروشینکو نے کہا کہ اس واقعے سے صورتحال تبدیل ہوگئی ہے کیونکہ ماضی میں روس یوکرین میں تنازع میں اپنی فوج کے ملوث ہونے کی تردید کرتا رہا ہے۔

یوکرین صدر نے قوم سے یہ خطاب ملک میں مارشل لا کے نفاذ کی پارلیمنٹ میں ان کی درخواست پر ووٹنگ سے قبل کیا۔

دوسری جانب امریکا نے روس کو تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ یوکرینی جہازوں کو قبضے میں لینے جیسی غیر قانونی کارروائیاں واشنگٹن اور ماسکو کے درمیان تعلقات معمول پر لانے کی کوششوں کی راہ میں رکاوٹ بن رہے ہیں۔

 

Check Also

افغان پولیس اہلکار نے فائرنگ کر کے اپنے ہی 7 ساتھیوں کو قتل کر ڈالا

قندھار: افغان پولیس اہلکار نے اپنے ہی ساتھیوں پر فائرنگ کر کے 7 اہلکاروں کو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *