کراچی: اسکول اسمبلی میں اندھی گولی کا نشانہ بننے والی کمسن اقصیٰ دم توڑ گئی

کراچی: سعید آباد میں اندھی گولی کا نشانہ بننے والی 7 سالہ طالبہ اقصیٰ دم توڑ گئی جب کہ کراچی پولیس چیف نے اس کیس کو ٹیسٹ کیس بنانے کے عزم کا اظہار کیا ہے۔

کراچی کے علاقے سعید آباد کے ایک اسکول میں تین روز قبل دوران اسمبلی اقصیٰ نامی بچی کو اندھی گولی لگی جس کے بعد اسے پہلے سول اسپتال اور بعدازاں قومی ادارہ برائے امراض اطفال میں داخل کرایا گیا۔

48 گھنٹوں سے انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں زیرعلاج رہنے والی اقصیٰ آج صبح دم توڑ گئی، ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ سیدھی طرف سے کمر میں لگی گولی اقصیٰ کے جسم میں موجود تھی جس سے اقصیٰ کے پھیپھڑے متاثر ہوئے۔

ڈاکٹروں کے مطابق اقصیٰ کو آج صبح سانس لینے میں دشواری کا سامنا تھا جس کی زندگی بچانے کے لیے میڈیکل ٹیم نے تمام تر کوششیں کیں لیکن وہ جانبر نہ ہوسکی۔

سات سالہ اقصیٰ کی پوسٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق بچی کو کمر کی دائیں طرف گولی لگی جو چھوٹے ہتھیار کی تھی۔

ذرائع پولیس سرجن آفیس کے مطابق بچی اقصیٰ کے جسم سے 32 بور کی گولی نکالی گئی جو کمر اور پیٹ سے ہوتی ہوئی سینے میں پھنس گئی تھی۔

دوسری جانب کراچی پولیس چیف ڈاکٹر امیر شیخ نے  کہا کہ اقصی ہلاکت کیس میں تمام اسٹیک ہولڈرز کو مل بیٹھ کر یہ دیکھنا ہوگا کہ اندھی گولیاں لگنے والے واقعات کیوں پیش آرہے ہیں۔

انھوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ اقصی ہلاکت کیس کو ٹیسٹ کیس بنائیں گے اور پتا چلائیں گے کہ گولی کہاں سے آئی۔

کراچی پولیس چیف کا کہنا تھا کہ کہ بچی کے اسکول کے قریب پولیس کی فائرنگ رینج بھی ہے اور واقعے کی تمام پہلوؤں سے تحقیقات کی جائیں گی اور وہ خود بھی اقصی کے گھر جائیں گے۔

کمسن اقصیٰ کے والدین شدت غم سے نڈھال ہیں اور انہوں نے حکومت پر غیر ذمہ داری برتنے کا الزام لگاتے ہوئے ذمہ داروں کو کیفر کردار تک پہنچانے کا مطالبہ کیا ہے۔

Check Also

وزیراعظم کا جرمن چانسلر کو ٹیلیفون، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر گفتگو

وزیراعظم عمران خان نے جرمن چانسلر انجیلا مرکل سے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر ٹیلیفونک …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *