عدالت میں پی ٹی آئی رکن صوبائی اسمبلی رو پڑے

لاہور: چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کا کہنا ہے کہ تحریک انصاف نے کب سے بدمعاشی شروع کردی، کیا لوگوں نے اس لیے ووٹ دیے، نیا پاکستان بدمعاشوں کی پیروی کر کے بنانے چلے ہیں۔

سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے قبضہ گروپ منشا بم کی گرفتاری سے متعلق شہری کی درخواست پر سماعت کی۔

عدالت نے ملک کرامت کھوکھر کو ملزم منشا بم کی سفارش کرنے پر طلب کیا۔عدالتی حکم پر تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی ملک کرامت کھوکھر اور رکن صوبائی اسمبلی ندیم عباس بارا پیش ہوئے۔

سماعت شروع ہوئی تو چیف جسٹس نے استفسار کیا منشا بم کون ہے؟ جس پر ایس پی پولیس نے عدالت کو بتایا یہ جوہر ٹاؤن کا بہت بڑا قبضہ گروپ ہے، عدالت کے حکم پر کارروائی کی تو سفارشیوں کے فون آنا شروع ہو گئے۔

چیف جسٹس نے ایس پی سے پوچھا سفارش کے لیے کس کا فون آیا جس پر ایس پی نے بتایا ایم این  اے ملک کرامت کھوکھر نے منشا بم کی گرفتاری روکنے کی درخواست کی جس پر عدالت نے انہیں فوری طلب کیا۔

پولیس نے عدالت کو بتایا کہ منشا بم اپنے بیٹوں کے ساتھ جوہر ٹاؤن میں زمینوں پر قبضےکرتا ہے اور اس کے خلاف 70 مقدمات درج ہیں جس پر چیف جسٹس نے ملزم منشا بم کی جانب سے پیش ہونے والے وکیل رانا سرور کی سرزنش کی۔

وکیل نے کیس سے علیحدگی اختیار کرتے ہوئے غیر مشروط معافی مانگی اور چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے ملزم منشا کو فوری گرفتار کرنے کا حکم دیا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے میں دیکھتا ہوں کون یہاں بدمعاش ہے، پولیس کے ساتھ بدتمیزی کسی صورت برداشت نہیں کروں گا اور سیاسی مداخلت کرنے والوں کو بھی نہیں چھوڑوں گا۔

اس موقع پر چیف جسٹس نے استفسار کیا ‘کیا لوگوں نے بدمعاشی کے لیے ووٹ دیے ہیں، انکوائری میں قبضہ گروپ کی پیروی ثابت ہوئی تو ملک کرامت کھوکھر بطور ایم این اے واپس نہیں جاؤ گے۔

پی ٹی آئی کے رکن صوبائی اسمبلی ندیم عباس بارا نے کہا کہ کیس شروع ہونے سے پہلے میں کچھ کہنا چاہتا ہوں، میرے خلاف ایس پی نے جھوٹے مقدمات درج کروائے، اگر مقدمات میں غلطی ثابت ہوئی تو استعفی دے دوں گا جس پر چیف جسٹس نے کہا ‘تم پہلے استعفیٰ دو جلدی کرو، اتنی تم لوگوں میں جرات نہیں کہ استعفی دے دو’۔

دوران سماعت ندیم عباس بارا نے رونا شروع کر دیا جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ باہر بدمعاشی کرتے ہو، اندر انکار اور پھر رونا شروع کر دیتے ہو۔

چیف جسٹس نے کہا کہ پی ٹی آئی والوں نے بدمعاشی کر کے ڈیرے بنا رکھے ہیں، کسی بدمعاش کو پاکستان میں نہیں رہنے دوں گا جس پر ملک کرامت کھوکھر نے بیان دیتے ہوئے کہا کہ میں منشا بم کو نہیں جانتا، میں نے ایس پی کو نہیں ڈی آئی جی کو فون کیا تھا۔

چیف جسٹس نے حکم دیا کہ بلائیں اس ڈی آئی جی آپریشنز کو جس نے سفارش کی جس کے بعد سماعت میں وقفہ کر دیا گیا۔

سماعت دوبارہ شروع ہوئی تو ڈی آئی جی آپریشنز نے عدالت میں پیش ہوکر اعتراف کیا کہ کرامت کھوکھر نے سفارش کے لیے فون کیا تھا۔

سپریم کورٹ نے تحریک انصاف کے ایم این اے کرامت کھوکھر کو جھوٹ بولنے پر نوٹس جاری کر دیا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کیوں نہ غلط بیانی پر آپ کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کی جائے، آپ نے عدالت میں کہا کہ آپ منشا بم کو نہیں جانتے اور پھر ڈی آئی جی کو منشا کے بیٹے کی رہائی کے لیے کیوں فون کیا۔

جسٹس ثاقب نثار نے کہا سب کچھ میری ڈیوائس میں ریکارڈ ہو چکا ہے جس پر کرامت کھوکھر نے کہا میں عدالت سے معذرت چاہتا ہوں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے جھوٹ بولنے والا صادق اور امین نہیں ہوتا، جھوٹ بولنے پر سزا دوں گا تب تمھیں پتا چلے گا، یہ کردار ہے آپ لوگوں کا، جھوٹ بولو گے تو کیا جواب دو گے، خدا کا خوف کرو لوگوں نے تمھیں ووٹ دیا ہے۔

اس موقع پر پی ٹی آئی ایم پی  اے ندیم عباس بارا نے روسٹرم پر چیف جسٹس کے سامنے ہاتھ جوڑے اور کہا کہ ‘مجھے معاف کر دیں میں تو ایسے ہی غلطی سے سپریم کورٹ آگیا’۔

چیف جسٹس نے ندیم عباس بارا کو کہا ‘تم بھی کل اسلام آباد آؤ دیکھتے ہیں معافی دینی ہے یا نہیں اور اپنا استعفی ساتھ لےکر آنا ورنہ میں خود تمھاری جگہ پر استعفی لکھ دوں گا۔

سپریم کورٹ نے پی ٹی آئی کے ایم این  اے کرامت کھوکھر اور ایم پی  اے ندیم عباس بارا کو کل سپریم کورٹ اسلام آباد طلب کرلیا۔

Check Also

میئر کراچی وسیم اختر کرپٹ ہیں: فیصل واوڈا اپنے مؤقف پر ڈٹ گئے

وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا نے ایک بار پھر میئر کراچی کو آڑے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *