امریکی دفتر خارجہ کی ترجمان کو ٹرمپ کیلئے کام کرنے پر ہوٹل سے نکال دیا گیا

لیزنگٹن: امریکی محکمہ خارجہ کی ترجمان سارہ سینڈر کو ڈونلڈ ٹرمپ کے لیے کام کرنے پر ریسٹورنٹ سے باہر نکال دیا گیا۔

سارہ سینڈر اپنے اہل خانہ کے ہمراہ رات کے کھانے پر ورجینیا کے ایک ریسٹورینٹ گئیں جس کی بکنگ ان کے شوہر کے نام سے ہوئی تھی۔

سارہ سینڈر جب اپنے اہل خانہ سمیت ٹیبل پر جا کر بیٹھیں تو ریسٹورنٹ کی خاتون مالک ولکنسن نے انہیں آکر کہا کہ ’ آپ ڈونلڈ ٹرمپ کے لئے کام کرتی ہیں فوراً ریسٹورنٹ سے نکلو‘۔

سارہ سیندڑ نے اس واقعے کو ٹوئٹر پوسٹ کے ذریعے عام کیا اور بتایا کہ ’ مجھے ڈونلڈ ٹرمپ کے لیے کام کرنے پر ہوٹل سے نکلنے کا کہا گیا تو میں خاموشی سے باہر نکل آئی‘۔

انہوں نے لکھا کہ میں ہمیشہ لوگوں کے ساتھ خندہ پیشانی سے پیش آتی ہوں چاہے وہ مخالف ہی کیوں نہ ہو، تاہم وہ باعزت طریقے سے اپنے عمل جاری رکھیں گی۔

دوسری جانب ریسٹورنٹ کی مالک ولکنسن نے کہا کہ میرا ماننا ہے کہ سارہ سینڈر انسانیت کے لیے کام نہیں کرتیں اور ٹرمپ جیسے ظالم شخص کا ساتھ دیتی ہیں۔

واضح  رہے کہ صدر ٹرمپ نے حال ہی میں تارکین وطن بچوں کو والدین سے الگ کرنے کا اعلان کیا تھا جس کے خلاف شدید مظاہرے کیے گئے، یہاں تک کہ ان کی اہلیہ ملانیا ٹرمپ نے بھی اس کی شدید مخالفت کی۔

عوامی دباؤ اور شدید مخالفت پر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایگزیکٹو آرڈر کے ذریعے اپنا فیصلہ واپس لے لیا تھا۔

یاد رہے کہ رواں برس اپریل میں امریکی اٹارنی جنرل جیف سیشنز نے امریکا اور میکسیکو کی سرحد غیر قانونی طور پر عبور کرنے والے تمام تارکین وطن کے خلاف ‘زیرو ٹورلینس’ کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایسے تمام افراد کے خلاف مجرمانہ قوانین کے تحت مقدمہ چلایا جائے گا۔

اس کے بعد سے نئی پالیسی کے تحت اپریل اور مئی کے دوران امریکا اور میکسیکو کی سرحد پر تارکین وطن کے 2 ہزار کے قریب بچوں کو والدین سے الگ کیا گیا تھا۔

Check Also

افغان پولیس اہلکار نے فائرنگ کر کے اپنے ہی 7 ساتھیوں کو قتل کر ڈالا

قندھار: افغان پولیس اہلکار نے اپنے ہی ساتھیوں پر فائرنگ کر کے 7 اہلکاروں کو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *