قبائلی علاقوں میں صوبائی اسمبلی کے انتخابات پچیس جولائی کو کرانے کا مطالبہ

خیبر پختونخوا کے وزیراعلٰی پرویز خٹک نے الیکشن کمیشن کو ایک مراسلے میں تجویز دی ہے کہ صوبے میں ضم شدہ قبائلی علاقوں میں بھی صوبائی اسمبلی کے انتخابات پچیس جولائی کے عام انتخابات کے ساتھ ہی منعقد کروائے جائیں۔

چیف الیکشن کمشنر جسٹس سردار محمد رضا کو لکھے گئے اس خط میں جسے میڈیا کو بھی جاری کیا گیا ہے، ان کا موقف ہے کہ صوبے میں اکثر سیاسی اتحادوں نے حکومتیں تشکیل دی ہیں لہذا قبائلی علاقوں سے بعد میں اکیس اراکین کا انتخاب وہاں کی سیاسی صورتحال پر اثر انداز ہوسکتا ہے۔

 

پرویز خٹک کا کہنا تھا کہ عام انتخابات کے نتیجے میں منتخب صوبائی حکومت کے زیر انتظام بعد میں قبائلی علاقوں میں انتخاب کروانے سے حکمراں جماعت کے خلاف الزامات اور تنقید کا سبب ہوگی جس سے صوبے میں سیاسی عدم استحکام پیدا ہوگا۔

ان کا موقف تھا کہ بیک وقت انتخابات سے الیکشن کمیشن صوبے کو مستقبل کے سیاسی عدم استحکام سے بچا سکے گا۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ قلیل وقت میں کمیشن کے لیے ایسا کرنا انتہائی مشکل ہوگا لیکن وسیع تر ملکی مفاد میں یہ ضروری ہے۔

خیبر پختونخوا قبائلی علاقے

اسی قسم کے خدشات صوبے کی حزب اختلاف کی جماعت عوامی نیشنل پارٹی نے بھی ظاہر کیے تھے۔

اے این پی کی سینٹر ستارہ ایاز نے بی بی سی کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ اکتیسوں آئینی ترمیم میں تاخیر کی ایک وجہ سیاسی جماعتوں کے درمیان اس پر عدم اتفاق تھا کہ قبائلی علاقوں میں ایک سال بعد کے انتخابات کا سیاسی صورتحال پر کیا اثر ہوگا۔

اس تجویز پر الیکشن کمیشن کا ردعمل ابھی سامنے نہیں آیا ہے لیکن مبصرین کے خیال میں موجودہ حالات میں اس کے لیے صوبہ خیبر پختونخوا اور اس میں ضم ہونے والے قبائلی علاقوں میں بیک وقت انتخابات کرانا کافی مشکل ثابت ہوسکتا ہے۔

Check Also

وزیراعظم کا جرمن چانسلر کو ٹیلیفون، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر گفتگو

وزیراعظم عمران خان نے جرمن چانسلر انجیلا مرکل سے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر ٹیلیفونک …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *