بدھ , اکتوبر 24 2018

تھرمیں غذائی قلت کے سبب مزید چار بچوں کی موت ہو گئی۔

مٹھی(پی پی نیوز ڈیسک) تھرمیں غذائی قلت اورامراض سے متاثرہ کمسن بچوں کی اموات کا سلسلہ نہیں رک سکا، آج چاربچے مٹھی کے سرکاری اسپتال میں انتقال کرگئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق تھر میں بچوں کی اموات کا اندوہناک سلسلہ جاری ہے ، آج انتقال کرنے والے چار بچوں کو ملا کر رواں ماہ جاں بحق ہونے والے بچوں کی تعداد 52 تک پہنچ چکی ہے۔

مٹھی اسپتال ذرائع کے مطابق رواں سال مٹھی اسپتال میں علاج کی غرض سے لائےگئے516بچےانتقال کرچکےہیں جبکہ اسپتال میں اس وقت بھی 80 بچے زیرعلاج ہیں۔

یاد رہے کہ پانچ روز قبل چیف جسٹس آف پاکستان نے تھر میں بچوں کی اموات کا نوٹس لیا تھا ، آج اس نوٹس پر کارروائی کرتے ہوئے چیف جسٹس ثاقب نثار نے حکم صادر کیا ہے کہ تھر میں اب غذائی قلت سے ایک بھی بچہ نہیں مرنا چاہیے ، میں اتوار کو خود علاقے کا دورہ کروں گا۔

اے جی سندھ نے یہ بھی بتایا کہ آئندہ 15 روز میں تھر کے لوگوں کو خوراک اور سہولیات کی ترسیل کا کام شروع ہوجائے گا۔

یاد رہے کہ تھر سندھ کا صحرائی علاقہ ہے جہاں خشک سالی کے سبب خواتین اور بچے غذائی قلت کا شکار رہتے ہیں، دور دراز علاقہ ہونے کے سبب یہاں صحت کے انتظامات بھی نہ ہونے کے برابر ہیں، تھر کے شہریوں کو قریب ترین صحت کی قابلِ ذکر سہولت اسلام کوٹ اور مٹھی میں ملتی ہے جبکہ تھر اس سے کہیں آگے تک وسیع و عریض رقبے پر پھیلا ہوا ہے۔

خشک سالی کے سبب تھر پارکر سے لے کر عمر کوٹ کےصحرائی علاقے بوندبوند پانی کو ترس گئے ہیں، رواں سال شدید قحط سالی سے ان کے مویشی بھی مرنے لگے ہیں ، ہزاروں مویشیوں کی جانوں کو اب بھی خطرہ لاحق ہے، انسانی جانوں کے ساتھ ساتھ نایاب نسل کے مور اور پرندے بھی مختلف امراض کا شکار ہورہے ہیں۔

Check Also

پی ٹی آئی کو ٹف ٹائم دینے کیلئے اپوزیشن کا 31اکتوبرکواےپی سی بلانے کا امکان.

اسلام آباد : تحریک انصاف کی حکومت کو ٹف ٹائم دینے کے لئے اپوزیشن کی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے